ایک ریسٹورنٹ میں ، سپلائرز سے کھانا پکانے اور پیش کرنے تک، شیف کسٹمر کے تجربے کے بہت سے پہلوءوں پر قابو پا سکتا ہے ۔ البتہ جیسے جیسے فوڈ ڈلیوری عام ہو رہی ہے، نئے چیلنجز سامنے آرہے ہیں تاکہ کسٹمر تک معیاری کھانا پہنچانے کو یقینی بنایا جائے ۔

پیش ہیں ۵ عناصر جن کا کھانے کی بہتر منتقلی پر اثر ہو تا ہے

مستقل مزاجی اور ٹیکسچ

مسئلہ:
سوسی پاستا سب سے مشکل ڈش ہوتی ہے کیونکہ سوس ایک جگہ جمع ہو سکتی ہے یا علیحدہ ہو سکتی ہے ۔ پاستا کو اگر انسولیٹڈ بکس میں رکھا جائے تو مزید پک سکتا ہے، یا ڈلیوری کو دوران سوس کو جذب کر سکتا ہے جس سے ڈش ڈرائی ہو سکتی ہے

حل:
سوس کو اور پاستا کو علیحدہ علیحدہ پیک کریں تاکہ کسٹمر اسے کھاتے وقت خود مکس کرلے

 

ٹمپریچر اور کھانے کی شکل

مسئلہ:
کھانے کی منتقلی کے وقت ٹمپریچر بدل سکتا ہے جس کی وجہ سے ڈشز کی مستقل مزاجی جیسے کہ سوپس یا اسٹیو، بدل سکتی ہے جس سے ڈش کی کشش کم ہو جاتی ہے ۔ اسٹر فرائی بے رنگ اور بے جان لگ سکتی ہے کیونکہ اس کی سوس ختم ہو سکتی ہے اور تازہ سبزیاں اور سیلڈ منتقلی کے دوران گرمائی ٹرانسفر ہونے سے اپنی بہترین حالت میں نہیں رہتیں

حل:
ایسے اجزاء کا استعمال کریں جو آپ کی سوس کی مستقل مزاجی اور ٹیکسچر کو قائم رکھے ۔ کوشش کریں کہ اپنی ڈش میں اچار یا جڑ والی سبزیوں کا استعمال کریں جو گرمائی کو بہتر انداز میں سہ سکتی ہیں ۔

 

پیکجنگ

مسئلہ:
کوشش کریں کے لیک پروف پیکجنگ کا استعمال کریں تاکہ ڈش منزل تک پہنچنے سے پہلے کھلے نہ یا بہے نہ ۔ متبادل کے طور پر پیکجنگ کو لپیٹ کر سیل کردیں تاکہ کھانے کو لیک ہونے یا گندگی سے بچایا جا سکے۔

حل:
ڈشز کی کوالٹی کو یقینی بنانے کے علاوہ ،آپ کو منتقلی کے دوران درپیش چیلنجز سے بھی نمٹنے کی ضرورت ہے ۔ مثال کے طور پر، گیلی ڈشز بہہ سکتی ہیں اور کھانے کے مزے کو خراب کر سکتی ہیں اگر انہیں مضبوط سیلڈ کنٹینرز میں مناسب طریقے سے پیک نہ کیا جائے

 

فوڈ ڈلیوری پر واپس جائیے