کیا آپ نے کھانے کے تحفظ کے بارے میں سنا ہے؟ نہیں؟ یہ اپنے قیمتی مصالحجات تالا بند کرنا نہیں ہے۔بلکہ، مذاق کے علاوہ، یہ ایک ایسا پلان ہے جس کے تحت آپ یقینی بناتے ہیں کہ آپ کے کچن سے اتنا کھانا ملتا رہے کہ سب کھانا کھا سکیں۔ یہ صرف کھانا پکانے کے حوالے سے نہیں بلکہ پھیکے جانے والے کھانوں کو بچانے کے حوالے سے بھی ہے۔

آفیشل اعداد کے تحط، دنیا کا ایک تہائی کھانا استعمال ہونے سے پہلے پھینک دیا جاتا ہے۔ یہ تقریباً 2 ارب لوگوں کو کھلانے کے لیے کافی ہے۔ ہاں، یہ ایک بہت بڑا نمبر ہے اور شاید کام کے اوقات کے بعد اس پہ بڑی بحث کی جا سکتی ہے۔ لیکن ہم یونی لیور والے یہ فخر سے کہ سکتے ہیں کہ استحکامی سوچ ہماری رگ رگ میں بسی ہے۔

اپنی تحقیق سے ہمیں پتا چلا ہے کہ 84% لوگ اس بات کے بارے میں فکرمند ہیں کہ جن جگہوں پر وہ کھانا کھاتے ہیں وہاں کتنا کھانا پھینکا جاتا ہے۔ مزید یہ کہ 70% لوگ اس بات کے لیے زیادہ رقم بھی خرچ کرنے کو تیار ہیں کہ ان کا پسندیدہ ہوٹل یا ریسٹورانٹ فضلے کو ٹھیک تریقے سے ٹھکانے لگانے کا انتظام کرے۔

یہ بات اتنی پیچیدہ نہیں جتنی سننے میں لگ رہی ہے۔ آپ نے 3 ڈبے بنانے ہیں، بیکار فضلہ، کھانا بناتے وقت کا کچرہ اور گاھک کی پلیٹ میں رہ جانے والا کھانا (عموماً 30% کھانا بالکل ضائع ہوتا ہے اور گاھک اسے ہاتھ بھی نہیں لگا پاتے). کم از کم 3 روز کے لیے ریکارڈ بنایں، تاکہ اندازہ ہو سکے کہ کس جگہ توجہ کی زیادہ ضرورت ہے۔

آپ چاہتے ہونگے کہ ایسی تمام ڈشیں جو بن سکتی ہیں، آپ اپنے گاھکوں کو پیش کریں، اس کے لیے آپ کو زیادہ تعداد میں کھانا تیار کرنے کی اشیاء کی ضرورت ہے۔ اس کا مطلب کہ آپ کا اسٹاک ختم ہونے کا زیادہ خطرہ زیادہ بھرا ہوا کچن اور زیادہ کھانا پکانے والے لوگ۔ اس مشکل کو کم کرنے کے لیے دیر تک پکنے والے کھانوں اور زیادہ اسٹاک اور افراد جن ڈشوں میں لگتے ہیں ان کو مینو سے خارج کر دیں۔

پیشین گوئی کرنا فضلے کو روکنے کے لیے ایک اہم جزو ہے۔اس کا مطلب ہے کہ آپ کو اندازہ لگانا ہے کہ آپ کے مینو میں کتنے ایسے کھانے ہیں جو آپ کے گاھک واقعی کھائیں گے۔ آپ کو موسم کا بھی خیال کرنا ہوگا۔ تازہ اور مزیدار چکن سلاد شاید گرمیوں میں ھٹ ہو، لیکن سردیوں میں یہ یقیناً کچرے دان کی زینت بنے گی۔ اپنے آس پڑوس کے ایونٹس اور فیسٹیول کا بھی خیال رکھیں۔ شاید کسی بڑے فیسٹیول یا ایوینٹ کی وجہ سے آپ کے یہاں گاھک زیادہ آئیں

سچ کو آنچ نہیں۔ اپنی کچن ٹیم کا جایزہ لیں اور ان کی کمزوری اور ان کے مضبوط پوائینٹس کو ذہن میں رکھیں۔ کیا یہ آپ کے مینو میں دی گئی ڈشیں اچھی طرح بنا سکتے ہیں؟ اگر نہیں، تو کچرا بڑھے گا ، اور تلخیاں بھی۔ یعنی آپ کو ان دونوں مسائل کو ہل کرنے کے لیے خود کو تیار کرنا ہوگا۔

پیلیا، ایک لذیذ اسپینش ڈش ہے۔ یہ ان چند پہلی ڈشز میں سے ایک ہے جو بچے کچے کھانوں سے بنتی ہیں، اور ہم سب جانتے ہیں کہ یہ کتنی مشہور ڈش ہے۔ اسہی طرح ہم چکن کے ٹکڑے استعمال کر سکتے ہیں ایک ٹیرین نامی ڈش بنانے کے لیے، بچی کچی بریڈ استعمال کر سکتے ہیں بریڈ کا میٹھا بنانے کے لیے، اور بچی ہوئی سبزیوں کا ذائقہ دار سوپ بن سکتا ہے۔ زرا سی تگڑم لگا کر اور اپنی تخلیقی صلاحیتوں کو استعمال کر کے آپ کچن کے فضلے سے ایک اچھی اور مزیدار ڈش بنا سکتے ہیں۔

آخری بات۔ اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ ری سائیکلنگ کے ماہر ہیں۔ یونی لیور کے پی ای ٹی ری سائیکلنگ کے عزم کے بارے میں جانئیے۔

سی ٹی اے، یہاں ساین اپ کریں کیا آپ مزید ایسے آیڈیاز جاننا چاہتے ہیں جو آپ کے کچن کی افادیت کو برقرار رکھ سکیں؟ تو یونی لیور فوڈ سولیوشن کے نیوز لیٹر کے لئے ساین اپ کیوں نہیں کرتے؟ چٹکلوں اور ٹوٹکوں سے بھرپور، یہ سیدھا آپ کے انباکس میں آتا ہے۔ اب آپ کے بچے ہوے کاموں کی لسٹ میں ایک کام کم ہو جاے گا۔
ایسی تمام معلومات جن کی آپ کو ضرورت ہے ہمارے پاس یہاں موجود ہے۔

*فوڈ اینڈ ایگریکلچر اورگنایزیشن سے لیے گئے اعداد و شمار۔
** کھانے کا فضلا ۔ ایسےمی کمپنیوں کے کیس جو کھانے کے فضلے کو اچھے طریقے سے ٹھکانے لگاتے ہیں